advertisement

سوت وقت انسانی روح کدھر سفر کرتی ہے

ایک مرتبہ حضرت علی رضی اللہ تعالی عنہ نماز جمعہ کی تیاری فرما رہے تھے جب خطبہ شروع ہوا تو آپ حضرت علی رضی اللہ تعالی عنہ روح کے بارے میں کچھ اہم ارشاد فرمانے لگے یہ بات ابھی شروع ہونے والی تھی کہ ایک شخص حضرت علی رضی اللہ تعالی عنہ سے کہنے لگا یا علی یہ انسان کی جو روح ہوتی ہے جب انسان سو جاتا ہے تو کیا یہ جسم سے جدا ہوتی ہے یا نہیں تو حضرت علی رضی اللہ تعالی عنہ نے اس بات کے جواب میں فرمانے لگے تمہارے جس اور ہر انسان کے جسم میں جو روح اللہ نے ڈالی ہے یہ تین حصوں پر تقسیم ہے پہلا حصہ انسانی جسم میں رہتا ہے

اور دوسرا حصہ انسان کے وجود سے باہر یعنی برزخ میں اپنا مقام یعنی اپنے آپ کو دیکھ رہا ہوتا ہے جب روح کا تیسرا حصہ انسان کے جسم سے جدا ہوتا ہے تب جدا ہوتا ہے ہے جب انسان سو جاتا ہے لہذا اگر وہ انسان نیکوکار ہے اللہ کی فرمانبرداری کرتا ہے جب روح اس کے جسم سے جدا ہوتی ہے تو وہ ایک ایسے عالم میں جاتی ہے جہاں پر اللہ تعالی نے جنات اور انسانی روحوں کے مابین ایک راستہ بنایا ہوتا ہے یہ روح جب وہاں پہنچ جاتی ہے تو انسان کو خواب آنے لگتے ہیں وہاں اس روح کو جو آگے دنیا میں پیش ہونے جارہا ہے ہوتا ہے خواب میں خواب میں آنے شروع ہو جاتے ہیں اور اگر انسان گناہگار ہے وہ اللہ کا نافرمان ہے وہ لوگوں پر ظلم کرتا ہے اللہ کے بتائے ہوئے راستے پر نہیں چلتا تو اس کی روح اسکے جسم میں قید ہو جاتی ہے اور اسے خواب میں کچھ نہیں نظر آتا اور اگر انسان نیکوکار ہے اللہ کا فرمانبردار ہے تو اللہ اسے ایک علم عطا کرتا ہے اسے علم نائلہ کہتے ہیں اس علم میں ایسی طاقت ہے کہ اگر انسان جب چاہے جہاں مرضی جا سکتا ہے اور اپنے تصور میں کسی کو بھی اس کی حالت میں دیکھ سکتا ہے لیکن یہ تب ہی ممکن ہوتا ہے جب انسان اللہ کے قریب رہتا ہے اس کی اطاعت کرتا ہے اس کے حکم کو بجا لاتا ہے جب یہ علم نائلہ اپنی بلند ترین مقام پالیتا ہے تو انسان جب چاہے جہاں چاہے جا سکتا ہےاپنی روح پر مکمل اختیار پالیتا ہے لہذا اس کو ہر چیز کی قید سے آزادی مل جاتی ہے یعنی اللہ تعالی اس سے اس قدر راضی ہو جاتا ہے کہ اسے یہ علم عطا کرتا ہے اور حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہٗ نے یہ بھی فرمایا کہ اللہ نے علم کے خزانے انسانوں کے لئے کھول کر رکھ دیئے ہیں مگر افسوس انسانوں کی اپنی غفلت کی وجہ سے وہ اس نعمت سے یعنی علم کے خزانوں سے بہت دور ہے اچھی بات دوسروں تک پہنچانا صدقہ جاریہ ہے آپ اس اچھی بات کو زیادہ سے زیادہ شیئر کریں اور اسلام کو دوسروں تک پہنچانے میں ھمارا ساتھ دیں جزاک اللہ

advertisement

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*